Iran Should Not Be Member of UN Commission on Women: US Envoy to U N

اقوام متحدہ :(اےیو ایس ) اقوام متحدہ میں امریکی سفیر نے ایک بار پھر خواتین کی حیثیت سے متعلق اقوام متحدہ کے کمیشن میں ایران کی شرکت کی بڑی شدومد سے مخالفت کی۔وائس آف امریکہ کی فارسی سروس کی ایک رپورٹ کے مطابق، توار کو ٹوئٹر پر ایک پوسٹ میں، لنڈا تھامس گرین فیلڈ نے کہا کہ ایرانی حکومت کو صنفی مساوات اور خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے وقف بین الاقوامی ادارے میں نہیں ہونا چاہیے۔ ایران کو خواتین کے اسٹیٹس سے متعلق کمیشن سے ہٹانا درست اقدام ہے۔ ایران کو کمیشن سے نکالنے کے حوالے سے امریکہ کا تجویز کردہ ایک مسودہ قرارداد اس ماہ کے آخر میں اقوام متحدہ میں ووٹنگ کے لیے پیش کیا جائے گا۔

مسودے میں کہاگیا ہے۔سلامی جمہوریہ کی پالیسیاں انسانی حقوق اور خواتین اور لڑکیوں کے حقوق اور عورتوں کے اختیارات کے کمیشن کے مشن سے انتہائی متصادم اورقابل مذمت ہیں۔ اور اسلامی جمہوریہ ایران کو (اس کی رکنیت کی)موجودہ مدت کے خاتمے سے قبل ہی فوری طور پر خواتین کے اسٹیٹس سے متعلق کمیشن سے ہٹا دینا چاہیے۔ ایرن نے حال ہی میں کمیشن کی رکنیت کی چار سالہ معیاد کاآغاز کیا ہے۔

کمیشن کا مقصد، جس کا اجلاس ہر سال مارچ میں ہوتا ہے، صنفی مساوات کو فروغ دینا اور خواتین کو بااختیار بنانا ہے۔پچھلے مہینے، گرین فیلڈ نے کہا تھا کہ کمیشن میں ایران کی رکنیت ادارے کی ساکھ پر ایک بدنما داغ ہے ۔ اور ہمارے خیال میں اسےبرداشت نہیں کیا جاسکتا۔ تھامس گرین فیلڈ نے یہ بیان نومبر میں، 22 سالہ مہسا امینی کی پولیس حراست میں ہلاکت کے بعد 16 ستمبر کو ایران میں شروع ہونے والے عوامی مظاہروں پر مرکوز سلامتی کونسل کے ارکان کے ایک غیر رسمی اجتماع میں دیا تھا، جسے ارریا میٹنگ کے نام سے جانا جاتا ہے۔