Bangladesh: Chief of Jamaat-e-Islami arrested over links with militancy

ڈھاکہ:(اے یو ایس ) بنگلا دیش میں جماعت اسلامی کے امیر شفیق الرحمٰن کو منگل کے روز ڈھاکہ کی ایک عدالت نے انتہاپسندی میں ملوث ہونے کے الزامات میں سات روزہ ریمانڈ پر دے دیا ۔پولس نے گذشتہ روز انہیں گرفتار کرنے کے بعد عدالت سے ان کو انسدا دہشت گردی قانون کے تحت دس روزہ ریمانڈ پر دینے کی استدعا کی تھی لیکن عدالت نے سات روز کا ریمانڈ ہی منظور کیا۔

واضح ہو کہ شفیق الرحمٰن پیر کے روز ڈھاکا میں انسداد دہشت گردی پولیس نے گرفتار کیا ہے۔غیر ملکی خبر ایجنسی کا کہنا ہے کہ پولیس نے جماعتِ اسلامی کے امیر پر عائد الزامات کی وضاحت نہیں کی۔ترجمان جماعتِ اسلامی بنگلا دیش کا کہنا ہے کہ جماعتِ اسلامی کے امیر کی گرفتاری کا مقصد مخالفین کو کچلنا ہے۔

پارٹی ترجمان کے مطابق یہ پارٹی کے خلاف 15 سال سے جاری غیر منصفانہ جبر کی ایک اور کڑی ہے۔واضح رہے کہ جماعت اسلامی نے گزشتہ روز وزیر اعظم بنگلا دیش کے خلاف مظاہروں میں شامل ہونے کا اعلان کیا تھا۔جماعت اسلامی پر 2012سے انتخابات میں حصہ لینے پر پابندی عائد ہے۔بنگلا دیش میں ایندھن کی قیمتوں میں اضافے اور لوڈ شیڈنگ کے سبب مظاہرے جاری ہیں۔اپوزیشن جماعتیں بنگلا دیشی وزیر اعظم شیخ حسینہ واجد سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کر رہی ہیں۔