Afghan Soldiers in Kunduz Surrender As Taliban Seizes More Citiesتصویر سوشل میڈیا

کابل: (اے یوایس) افغانستان میں طالبان کی پیش قدمی تیزی سے جاری ہے اور شبرغان ایئرپورٹ کا کنٹرول بھی طالبان کے قبضے میں چلا گیا، جبکہ قندوز میں افغان فورسز کے اہلکاروں کی طالبان کے آگے سرینڈر کرنے کی ویڈیو بھی سامنے آئی ہیں۔

افغانستان کے شہر ہرات اور صوبے غزنی میں طالبان کے حملے جاری ہیں، حکومتی فورسز نے ہرات میں طالبان کو پیچھے دھکیل دیا ہے جبکہ طالبان نے زیر قبضہ شہروں میں جیلوں سے ایک ہزار سے زائد قیدیوں کو آزاد کرا دیا جس میں 200 طالبان شامل ہیں۔دوسری جانب ترکی کابل ایئرپورٹ کا انتظام سنبھالنے کے اپنے ارادے پراب بھی قائم ہے اور کہتا ہے کہ افغانستان کی صورتحال کا قریب سے جائزہ لیا جارہا ہے، جبکہ طالبان نے ترکی کوخبردار کیا ہے کہ وہ کابل ایئر پورٹ کی حفاظت کے لیے افغانستان میں فوجی نہ رکھے۔

ترکی کے دوعہدیداروں نے بتایاہے کہ ترکی ابھی بھی غیر ملکی فوج کے انخلا کے بعدکابل ایئرپورٹ کا کنٹرول سنبھالنے اور اسکے تحفظ کا ارادہ رکھتا ہے لیکن طالبان کی پیش رفت کے بعد صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہے۔ترک صدر نے ترک ٹی وی کو انٹرویو میں کہا ہے کہ وہ افغانستان میں جھڑپوں کو روکنے کی کوشش کیلئے طالبان رہنماؤں سے ملاقات کرسکتے ہیں۔ہرات کے گورنرنے کہا ہے کہ طالبان نے کل رات ہرات شہر پر تمام اطراف سے حملہ کیا جس پر اسے سیکیورٹی فورسز اور سویلین فورسز کی جانب سے شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔

افغان میڈیا کے مطابق غزنی میں سیکیورٹی فورسزاور طالبان کے درمیان شدید جھڑپیں جاری ہیں، صوبے میں پولیس ہیڈ کوارٹر طالبان کے قبضے میں آگیا ہے۔افغان حکام نے بتایا ہے کہ طالبان نے حالیہ دنوں میں 6 شہروں پر قبضے کے دوران جیلوں سے ایک ہزار سے زائد قیدیوں کو رہا کردیا ہے، زیادہ تر قیدیوں کو منشیات اسمگلنگ، اغوا اور ڈکیتی کی وارداتوں میں سزا ہوئی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *