DNA test confirmed ISIS chief al-Qurayshi's identity: says John Kirbyتصویر سوشل میڈیا

واشنگٹن:(اے یو ایس)امریکی وزارت دفاع پینٹاگان کے ترجمان جان کیربی کے مطابق داعش تنظیم کے ہلاک شدہ سربراہ عبداللہ قرداش کی شناخت کی تصدیق ڈی این اے ٹیسٹ اور انگلیوں کے نشانات سے ہو گئی۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ اس بات کے ”مضبوط شواہد“ ہیں کہ امریکی فوج نہیں بلکہ داعش تنظیم امریکی حملے میں شہریوں کی ہلاکتوں کی ذمے دار ہے۔ اس کارروائی میں شام میں داعش تنظیم کا سربراہ مارا گیا۔

جمعرات کے روز پریس کانفرنس میں جان کیربی نے واضح کیا کہ امریکا اس کارروائی کا جائزہ لینے کے لیے تیار ہے تا کہ اس بات کی تصدیق ہو سکے کہ وہ کسی شہری کی ہلاکت کا سبب نہیں بنا۔اس سے قبل امریکی وزیر دفاع لائیڈ آسٹن نے باور کرایا تھا کہ ان کے ملک نے داعش کے سربراہ عبداللہ قرداش کو ہلاک کر کے تنظیم کو کاری ضرب پہنچائی ہے۔ جمعرات کے روز جاری بیان میں آسٹن نے زور دیا کہ داعش کے خلاف لڑائی جاری رہے گی کیوں کہ تنظیم کے افکار ابھی باقی ہیں۔

اس سے قبل امریکی صدر جو بائیڈن نے جمعرات کے روز ٹی وی پر خطاب میں اعلان کیا تھا کہ ان کے ملک نے داعش تنظیم کے سربراہ ابو ابراہیم الہاشمی القرشی کو ہلاک کر کے”ایک بڑے دہشت گرد خطرے“ کو مٹا دیا ہے۔ امریکی فوج کے کمانڈوز کے ایک یونٹ نے جمعرات کو علی الصباح شام میں ایک گھر پر ا±تر کر کارروائی انجام دی۔ اس کے دوران میں داعش کے سربراہ نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ داعش کا سربراہ اس مکان میں اپنے گھر کے ساتھ مقیم تھا۔

بائیڈن کے مطابق القرشی کی موت دنیا بھر میں دہشت گرد تنظیموں کے رہ نماؤں کو یہ بھرپور پیغام دے رہی ہے کہ”ہم آپ لوگوں کا تعاقب کریں گے اور آپ کو پا لیں گے“۔امریکی صدر نے کہا کہ ”ہم نے فضائی حملے کے بدلے کمانڈوز کو گھر پر اتارا تا کہ شہریوں کا کم سے کم جانی نقصان ہو جب کہ اس طریقے میں ہمارے اہل کاروں کو بڑا خطرہ تھا“۔آپریشن میں کوئی امریکی اہل کار زخمی نہیں ہوا۔ تاہم کارروائی میں شریک ایک ہیلی کاپٹر فنی خرابی کا شکار ہوا جس کے سبب ہیلی کاپٹر کو اسی جگہ پر تباہ کر دیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *