Kidnapped Sikh family found dead in California,relatives in Punjab devastatedتصویر سوشل میڈیا

لاس اینجلس:امریکہ کے کیلیفورنیا ریاست میں 8 ماہ کے بچے سمیت جس سکھ خاندان کے چار افرا کو بندوق کی نال پر اغوا کیا گیا تھا وہ ایک مقام پر مردہ پائے گئے۔کیلی فورنیا میں مرسیڈی کاؤنٹی کے شیرف نے بتایا کہ خاندان کے ارکان کی شناخت8 ماہ کی اروہی دھیری، اس کی ماں 27 سالہ جسلین کور،36 سالہ والد جسدیپ سنگھ، اور 39سالہ چچا امندیپ سنگھ کے طور پر کی گئی ہے۔ان چاروں کو ان کی کار سمیت سوموار کی رات میں اغوا کیا گیا تھا۔اور سوموار کی رات میں ہی ان کی کار سوختہ حالت میں مل گئی تھی لیکن ایک زرعی مزدور نے ان چاروں کو ایک باغ میں مردہ حالت میں پڑا دیکھا۔اغوا اکار کے شبہ میںایک 48 سالہ شخص کو حراست میں لے لیا گیا ہے ۔ سوموار کی رات دیر گئے خاندان کی گاڑی جلی ہوئی حالت میں ملتے ہی قانون نافذ کرنے والے حکام نے یہ تعین کیا کہ چاروں کو اغوا کیا گیا تھا۔

ایک نیوز ریلیز کے مطابق، انٹیلی جنس حکام کو منگل کی صبح اطلاع ملی کہ مرسڈ کاؤنٹی میں ایک اے ٹی ایم میں متاثرہ کا بینک کارڈ استعمال کیا گیا تھا۔ مرسڈ کاو¿نٹی شیرف کے دفتر نے ایک بیان میں کہا کہ تفتیش کاروں نے اغوا کی جگہ سے بینک ٹرانزیکشن کرنے والے ایک شخص کی تصویر حاصل کی جو تصویر میں موجود شخص سے بہت ملتی جلتی نظر آتی ہے۔قانون نافذ کرنے والے اداروں کے پہنچنے سے پہلے ہی مشتبہ شخص، جیسس مینوئل سالگاڈو نام کے مشتبہ نے خود کشی کی کوشش کی ور اس وقت تشویش ناک حالت میں حراست میں ہے اور زیر علاج ہے۔پنجاب کے ہوشیار پور کے ہرسی پنڈ سے تعلق رکھنے والے اس خاندان کی ہلاکت کے بارے میں خبر ملتے ہی پورے گاؤں میں غم و صدمہ کی لہر دوڑ گئی ۔ جسدیپ اور امندیپ کے والد ڈاکٹر رندھیر سنگھ اور والدہ کرپال کور اس کے بعدزبردست صدمے میں ہیں۔

رندھیر محکمہ صحت سے اور کرپال محکمہ تعلیم سے ریٹائر ہوئے ہیں۔ رندھیر اترا کھنڈ میں ایک مذہبی تقاضہ کو پرا کرنے کے لیے 29 ستمبر کو امریکہ سے ہندوستان واپس آئے تھے۔جالندھر میں جسلین کے آبائی گاو¿ں جنڈیر میں اس کی بھابھی امندیپ کور نے کہا کہ وہ یہ صدمہ برداشت نہیں کر سکتیں۔ جسلین کی والدہ گرمیت کور اور اس کے والد گرنام سنگھ پر، جو پیشے سے کاشتکار ہیں، سکتہ طاری تھا وہ دونوں صدمہ سے کم سم بیٹھے تھے ۔ گورنام نے بدھ کے روز بتایا کہ ان کی بیٹی (جسلین) کی شادی جنوری 2019 میں جسدیپ سے ہوئی اور اکتوبر 2020 میں امریکا چلی گئی۔ حال ہی میں اس نے کہا تھا کہ وہ ہم سے ملاقات کے لیے جنوری 2023 میں ہندوستان آنے کا ارادہ کر رہے ہیں اور ہم اپنی نواسی کو اس کی پیدائش کے بعد پہلی بار دیکھنے کے لیے بہت پرجوش تھے اور اپنی نواسی کی آمد کا جشن منانے کا منصوبہ بنایا تھا جو ان کے ہندوستان کے دورے کے وقت ایک سال کی ہو جاتی۔انہوں نے کہا، انہوں نے مزید کہا کہ انہیں اس بات کا کوئی پتہ نہیں تھا کہ اغوا کیوں اور کیسے ہوا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *