Pakistanis praise PM Modi, Imran Khan should learn from himتصویر سوشل میڈیا

اسلام آباد: پاکستان کے سابق وزیراعظم عمران خان توشہ خانہ سے سرکاری تحائف بیچ کر کروڑوں روپے کمانے پر بری طرح ٹرول ہو رہے ہیں۔ بیرون ملک پاکستانی عوام بھی اس معاملے پر عمران خان اور ان کی اہلیہ بشری بی بی کو تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔ پاکستان کی نئی حکومت نے انکشاف کیا ہے کہ بیرون ملک سے ملنے والے سونے اور ہیروں کے تحائف فروخت کر کے عمران خان نے توشہ خانہ کے سرکاری تحائف بیچ کر 14 کروڑ 20 لاکھ روپے کمائے۔ اس انکشاف کے بعد سے پاکستان میں عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے اور انہیں ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی سے سیکھنے کا مشورہ دیا جا رہا ہے۔ پاکستانی اس سلسلے میں پی ایم مودی کی ایک ویڈیو بھی شیئر کر رہے ہیں۔

مودی کی اس ویڈیو پر سینئر پاکستانی صحافی وینگاس کا کہنا ہے کہ عمران خان یہ ویڈیو ضرور دیکھیں جس میں ہندوستان کے وزیر اعظم نریندر مودی کہتے ہیں کہ جب انہیں کوئی تحفہ ملتا ہے تو وہ اسے نہیں رکھتے۔ اس کے بجائے وہ اسے نیلام کردیتے تھے اور اس سے حاصل ہونے والی رقم لڑکیوں کی تعلیم کے لیے عطیہ کردیتے تھے۔ پاکستانی صحافی نصراللہ ملک نے بھی پی ایم مودی کی تعریف کی ہے۔ ان کی ویڈیو کے ٹویٹ کو 2 ہزار سے زائد لوگ ری ٹویٹ کر چکے ہیں اور 4 ہزار سے زائد لوگوں نے اسے پسند کیا ہے۔پاکستانیوں کی جانب سے شیئر کیے جانے والے پی ایم مودی کی ایک ویڈیو میں کہا گیا ہے کہ جب میں گجرات کا وزیراعلیٰ تھا تو مجھے سونے اور چاندی کے بہت سے تحفے ملے تھے اور میں نے تہہ دل سے انہیں قبول بھی کیا تھا لیکن میں نے وہ تمام تحائف سرکاری توشہ خانہ میں جمع کرادیئے۔

لوگ اس سے تنگ آ گئے۔ میں نے پھر ان تحائف کی قیمت مقرر کی اور بعد میں ان کی نیلامی شروع کردی۔ اس نیلامی سے حاصل ہونے والی رقم لڑکیوں کی تعلیم کے لیے عطیہ کی گئی۔ میں نے نیلامی سے 100 کروڑ سے زیادہ رقم اکٹھاکی اور لڑکیوں کی تعلیم کے لیے دی۔پاکستان کی شہباز شریف حکومت اب عمران خان سے اس رقم کا حساب مانگ رہی ہے۔ عمران کی کمائی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ انہوں نے اپنے پورے کیرئیر میں 14 کروڑ 10 لاکھ روپے کمائے جب کہ انہوں نے سرکاری تحائف بیچ کر 14 کروڑ 20 لاکھ روپے کمائے۔ پاکستان کو ریاست مدینہ بنانے کا وعدہ کرنے والے عمران خان کومودی سے سبق سیکھنے کا مشورہ دیا جا رہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *