Two labourers from U.P. killed in grenade attack in J&Kتصویر سوشل میڈیا

سری نگر:(اے یو ایس ) جموں و کشمیر پولس کے مطابق کے شوپیاں ضلع میں منگل کو علی الصباح ایک دہشت گردانہ حملے میں دو غیر ریاستی مزدور، جو ارپردیش کے رہائشی تھے، ہلاک ہو گئے ۔ جموں و کشمیر کے ایل جی سمیت کئی سیاسی پارٹیوں نے اس حملہ کی ، جوپیر کے روز گرینیڈ سے کیے گئے،سخت مذمت کی ۔ پولیس نے بتایا کہ حملے کے بعد علاقہ میں گھیرا بندی کرکے تلاشی مہم چلائی گئی۔ اس دوران ممنوعہ تنظیم لشکر طیبہ ( ایل ای ٹی ) کے ایک مقامی ہائبرڈدہشت گرد کو گرفتار کیا گیا۔

دراصل ہائبرڈ دہشت گرد وہ لوگ ہوتے ہیں، جو اس طرح کے حملے کرنے کے بعد اکثر عام زندگی میں واپس لوٹ جاتے ہیں۔کشمیر زون پولیس نے ایک ٹویٹ میں کہا : دہشت گردوں نے شوپیاں کے ہرمن علاقہ میں ایک گرینیڈ پھینکا، جس میں اترپردیش کے قنوج کے رہنے والے دو مزدور میش کمار اور رام ساگر زخمی ہوگئے۔ انہیں اسپتال لے جایا گیا، جہاں دونوں نے دم توڑ دیا۔ انہوں نے کہا کہ علاقہ کا محاصرہ کرلیا گیا ہے اور حملہ آوروں کو پکڑنے کیلئے تلاشی مہم چلائی جارہی ہے۔اے ڈی جی پی کشمیر وجے کمار نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ لشکر کا ایک ہائبرڈ دہشت گرد، جس نے گرینیڈ پھینکا تھا، اس کو تلاشی مہم کے دوران گرفتار کرلیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ گرفتار دہشت گرد کی شناخت ہرمن کے عمران بشیر غنی کے طور پر ہوئی ہے۔پولیس افسر نے بتایا کہ متاثرین ایک ٹین شیڈ میں رہ رہے تھے اور حملہ آوروں نے رات میں شیڈ کے اندر گرینیڈ پھینکا تھا۔ شوپیا میں نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے وجے کمار نے کہا کہ حملے میں شامل دیگر لوگوں کی گرفتاری کے لیے تلاشی مہم کے دوران ایک دیگر مشتبہ کو گرفتار کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس حملے میں شامل لشکر طیبہ کے دہشت گرد کو ہم جلد سے جلد مار گرائیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *