US and allies must continue military aid to Ukraine says Gen Wesley Clarkتصویر سوشل میڈیا

واشنگٹن:(اے یو ایس) ایک ایسے وقت میں جب روسی صدر یوکرین کی جنگ جیتنے کےلئے ہر حربہ آزمانے کا اعادہ کر رہے ہیں، یورپ میں اتحادی فوجوں کے سابق امریکی کمانڈر جنرل ویسلی کلارک نے وائس آف امریکہ کے ساتھ ایک انٹرویو میں بتایا ہے کہ صدر پوتین مغرب کو دھمکانے اور یوکرین کو مغربی حمایت سے محروم کرنے کے لئے جو کچھ بھی کر سکتے ہیں کر رہے ہیں، لیکن میدان جنگ میں اس سب کا کیا نتیجہ نکلتا ہے وہ اہم ہے۔

جنرل ویسلی نے کہا کہ اس وقت روس میدان جنگ میں ہار رہا ہے،چنانچہ یہ بات بہت اہم ہے کہ امریکہ اور دوسرے مغربی ممالک یوکرین کی فوجی اور مالی مدد جاری رکھیں۔یہ معلوم کیے جانے پر کہ جب پوتین ایٹمی جنگ کی بات کرتے ہیں تو کیا وہ آپ کے خیال میں سنجیدہ ہیں یا محض ڈرا رہے ہیں، جنرل کلارک نے کہا کہ یہ پہلو تشویشناک ہونا چاہیے۔”میں نہیں سمجھتا کہ وہ فریب دینے کی کوشش کر رہے ہیں۔ میرے خیال میں یہ ممکن ہے کہ وہ ج کسی بھی وقت جوہری ہتھیار استعمال کر سکتے ہیں کیونکہ ان کے نزدیک ایسا کرنا ان کے بہترین مفاد میں ہے۔ لیکن اب تک انہوں نے جوہری ہتھیاروں کو استعمال نہیں کیا ہے،اور ہمیں اس بات سے خوفزدہ نہیں ہونا چاہیے کہ وہ جوہری ہتھیاروں کی بات کر رہے ہیں۔ ہمیں یو کرین کی مدد جاری رکھنی چاہیے ، یوکرین کو روس کو اپنے ملک سے نکالنے کے جس کی اسے روس کو یوکرین سے نکالنے کے لئے ضرورت ہے اور جب روسی میدان جنگ میں ہاریں گے تو ان جوہری ہتھیاروں کے کوئی زیادہ معنی نہیں رہ جائیں گے۔

پوتین نے قازقستان میں ایک سربراہ کانفرنس میں شرکت کے بعد رپورٹروں کو بتایا کہ روسی وزارت دفاع نے نے تین لاکھ ریزرو فوجیوں کو طلب کرنے کا ہدف مقرر کیا تھا، ان میں سے2 لاکھ22 ہزار اب تک آ چکے ہیں۔ ان میں سے 33 ہزار پہلے ہی ملٹری یونٹوں میں پہنچ چکے ہیں جب کہ16 ہزار جنگ میں شامل ہو چکے ہیں۔ایسے میں جب کہ یوکرین کے جوابی حملے میں پوتین کی فوجوں کے ہاتھوں سے مقبوضہ علاقے نکل گئے، ستمبر میں انکی جانب سے ریزرو فوجیوں کی طلبی کے اعلان نے روسی عوام میں عدم اطمنان اور مایوسی پیدا کردی جہاں 65 برس سے کم عمر کے تقریباً تمام ہی لوگ ریزرو فوجیوں کی حیثیت سے رجسٹرڈ ہیں۔ اسکے ساتھ ہی روس کے قوم پرستوں نے اس طریقہ کار پر نکتہ چینی کی جو کریملن نے اس جنگ کے لئے اختیار کیا۔ اور یوں پوتین پر دباو¿ بڑھایا کہ وہ جنگ کا پانسہ روس کے حق میں پلٹنے کے لئے مزید اقدامات کریں۔ روسی میڈیا کی رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ طلب کئے جانے والے ریزرو فوجیوں کی تعداد12 لاکھ تک ہو سکتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *