NASA’s Mars rover records 10 seconds of dust devil on the planet; Details hereتصویر سوشل میڈیا

واشنگٹن:(اے یو ایس ) ناسا کی تیار کردہ خلائی گاڑی ’مارز روور‘ نے مریخ پر ہوائی بگولہ جسے انگریزی میں ’ڈسٹ ڈیول‘ یا گرد کا شیطان بھی کہا جاتا ہے کا پہلی دفعہ مشاہدہ کیا ہے۔ یہ خصوصی گاڑی مریخ کی سطح پر اتاری گئی ہے جو مریخ کی سطح اور فضا کے بارے میں زمینی مرکز کو سائنسی معلومات فراہم کرر ہی ہے۔مارز روور کا مائیکروفون اس وقت آن تھا جب یہ ہوائی بگولہ روور کے اوپر سے گزرا۔

خلائی جہاز نے اس بگولے کی آواز کو ریکارڈ بھی کیا۔40 کلومیٹر کی رفتار سے چلتے ہوئے اس ہوائی بگولے کی ا?واز ریکارڈ کرنے میں محض دس سیکنڈ لگے۔ اس ریکارڈنگ میں پریزیورنس نامی خلائی گاڑی پر گرد اور کنکریوں کے ٹکرانے کی آواز سنی جا سکتی ہے۔منگل کے روز سائنس دانوں نے اپنی نوعیت کی یہ پہلی ریکارڈنگ ریلیز کی ہے۔یہ خلائی جہاز چاند کی سطح سے محض 130 کلومیٹر دور سے گزرا۔خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کے مطابق اس ہوائی بگولے کی آواز زمین پر چلنے والے بگولوں سے مماثلت رکھتی ہے۔ اگرچہ یہ آواز زمین سے کہیں مدہم ہے، کیونکہ مریخ پر فضا زمین کے مقابلے میں لطیف ہے۔محققین کا کہنا ہے کہ مریخ کی لطیف فضا کی وجہ سے سیارے میں ہوا کا دباؤ بھی زمین سے کم ہے اور ہوا سے پیدا ہونے والی آواز بھی قدرے مدہم ہوتی ہے۔

ہوائی بگولے کے گزرنے کا واقعہ گزشتہ برس واقعہ ہوا تھا اور یونیورسٹی آف ٹولوز کی ناو¿می مرڈوخ کے مطابق یہ بگولہ ا?ناً فاناً مرٰیخ پر بھیجی جانے والی کے اوپر سے گزر گیا اس لیے آڈیو کا دورانیہ بھی بہت مختصر ہے۔ناو¿می نیچر کمیونی کیشنز میں شائع ہونے والی تحقیق کی اہم رکن ناو¿می کا کہنا تھا کہ بگولے کا یہ مختصر سفر مکمل طور پر ریکارڈ کیا گیا اور’ روور‘ کے موسم کا معائنہ کرنے والے کیمرے نے ڈیٹا جمع کیا۔مریخ پر ہوائی بگولے عشروں سے زمین سے ریکارڈ کیے جا رہے ہیں لیکن یہ پہلا موقع ہے کہ اس کی آواز سننے کو ملی ہے۔ سرخ سیارے پر یہ بگولے عام ہیں اور ریکارڈ کیا جانے والا یہ بگولہ 400 فٹ بلند اور 80 فٹ چوڑا تھا۔ یہ بگولہ 16 فٹ فی سیکنڈ کی رفتار سے سفر کر رہا تھا۔مارز روور کا مائیکروفون روزانہ دن میں تین منٹ کے لیے کھولا جاتا ہے اور یہ محض اتفاق تھا کہ اس وقت فضائی بگولہ خلائی جہاز کے اوپر سے گزر رہا تھا۔ناو¿می کا کہنا ہے کہ اس مائیکروفون کی ریکارڈنگ سے سائنس دانوں کو مریخ کی فضا کا معائنہ کرنے کا موقع ملتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *